صفی اللہ قادیانی نے ترجمہ تو نقل کیا، مگر آخری فقرہ خود ہی بدل دیا۔ پہلے ان کا ترجمہ، اور پھر جہاں سے ترجمہ نقل کیا گیا تھا۔

ترجمہ اس کتاب سے لیا گیا تھا: